پانامہ لیکس کے دیگر افراد کے احتساب کیلئے اپیل کے قابل سماعت ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ

لاہور (میڈیا پاکستان) لاہور ہائیکورٹ نے شریف خاندان کے علاوہ پانامہ لیکس کے دیگر افراد کے احتساب کیلئے اپیل کے قابل سماعت ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا۔ تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کی جسٹس عائشہ اے ملک کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے مقامی شہری سید محمد الیاس کی اپیل پر ابتدائی سماعت کی. دو رکنی بنچ نے اپیل کنندہ سے استفسار کیا کہ اپیل میں کوئی قانونی نکتہ نہیں اٹھایا گیا۔ اپیل میں وزیر اعظم پاکستان، سپیکر قومی اسمبلی اور چیف الیکشن کمشنر پاکستان اور دیگر کو فریق بنایا گیا ہے اور یہ موقف اختیار کیا کہ پانامہ لیکس میں 300 سے زائد افراد کا نام آیا ہے لیکن احتساب صرف شریف خاندان کا کیا گیا۔ اپیل کنندہ کے مطابق صرف شریف خاندان کا احتساب کرنا اور دیگر نظر انداز کرنا آئین  کی منشا کے برعکس ہے ۔ اپیل کنندہ نے استدعا کی کہ پانامہ لیکس میں شامل دیگر افراد بھی احتساب کیا جائے۔ اپیل میں چیئرمین نیب کے تعیناتی بھی اعتراضات اٹھائے گئے اور جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال کی تقرری کو بھی کالعدم قرار دینے کی استدعا کی گئی ہے۔اپیل میں یہ اعتراض بھی اٹھایا گیا کہ ہائیکورٹ کے سنگل بنچ نے حقائق کے برعکس فیصلہ دیا، اس لیے پانامہ لیکس کے دیگر کرداروں کے خلاف کارروائی کا حکم دیا جائے۔ عدالت نے درخواست کے قابل سماعت ہونے سے متعلق فیصلہ محفوظ کر لیا۔

یہ بھی پڑھیں

ماسٹر پلان عامر احمد خان

میڈیا 92 نیوز ڈسک ماسٹر پلان2050ءلاہور ڈویژن کے روشن مستقبل کا تعین کرے گا ۔ …