بھارت پاکستان کی زراعت اور ہائیڈل منصوبوں کو نقصان پہنچا رہا ہے، خواجہ آصف

وفاقی وزیر خارجہ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ بھارت نے سندھ طاس معاہدے پر عملدرآمد چھوڑ دیا اور بھارت پاکستان کی زراعت اور ہائیڈل منصوبوں کو نقصان پہنچارہا ہے، عالمی بینک سندھ طاس معاہدے پر تعمیری کردار اداکرے۔
اسلام آباد میں سندھ طاس معاہدے سے متعلق سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ پاکستان سندھ طاس معاہدے کے تحت بھارت کے ساتھ آبی تنازعات حل کرنے پر تیار ہے۔
وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان سندھ طاس معاہدے کی پاسداری کرتا ہے، بھارت کو بھی چاہیے کہ وہ سندھ طاس معاہدے پر عملدرآمد یقینی بنائے، پاکستان چاہتاہے کہ بھارت سندھ طاس معاہدے کی پاسداری کرے۔
وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان سندھ طاس معاہدے کے تحت بھارت کے ساتھ آبی تنازعات حل کرنے پر تیار ہے اور بھارت کے ساتھ سندھ طاس معاہدے کی اصل روح کے مطابق کام کرنا چاہتے ہیں۔
خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ بھارت نے کئی منصوبے سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بنائے اور ان منصوبوں کے ڈیزائن بھی پاکستان کو فراہم نہیں کیے، بھارت پاکستان کی زراعت اور ہائیڈل منصوبوں کو نقصان پہنچارہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ بھارت کی جانب سے مسائل سے زیادہ مسائل ہم نے خود پیدا کیے ہیں، ہم جس انداز سے پانی استعمال کرتے ہیں وہ ایک مجرمانہ فعل ہے، ہم پانی ایسے استعمال کرتے ہیں جیسے ہمارے پاس لامحدود پانی ہے۔
وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ پانی کی مقامی تقسیم پر خرچ ہونےوالی رقم کا80 فیصد ریکورنہیں ہوتا، اگرپانی کا ضیاع جاری رہا تومستقبل میں مزیدخطرات کا سامناکرنا پڑےگا۔
خواجہ آصف نے کہا کہ سیاسی جماعتوں نےبھی ماضی میں پانی کےمسئلےکوسنجیدگی سےنہیں لیا، اب حکومت نے مسئلے کا ادراک کرتے ہوئے الگ وزارت قائم کی ہے، پانی سے متعلق قومی سطح پر شعور اجاگر کرنا ہوگا۔

یہ بھی پڑھیں

پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان پہلا ٹیسٹ ڈرا ہوگیا

 کراچی: پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان دو میچوں پر مشتمل سیریز کا پہلا ٹیسٹ میچ …