ہائوسنگ سکیم مالکان جھوٹی درخواستوں اور بلیک میلنگ سے تنگ ، ڈی جی اینٹی کر پشن سے نوٹس کا مطالبہ

لاہور(میڈیا پاکستان) لاہورڈویژن میں عوام کے لئے آسان قسطوں پر سستی اور بنیادی سہولتوں سے بھرپور اور بے ضابطگیوں سے پاک ہائوسنگ سکیمیں بنانے کے خواب ایل ڈی اے کی سی ایم پی برانچ کے افسران نے توڑ دئیے ۔ پسند اور ناپسند کی بنیاد پر کی جانے والی کارروائیوں نے ایل ڈی اے اور محکمہ اینٹی کرپشن کے افسران کا کردار مشکوک کردیا، میڈیا پاکستان کو ملنے والی مبینہ اطلاعات کے مطابق ذرائع نے مزید انکشاف کیا ہے کہ سی ایم پی برانچ کے ایک ڈائریکٹر اور محکمہ اینٹی کرپشن ہیڈکوارٹر میں تعینات ایک اعلیٰ افسر کے ریڈر نے سوسائٹیوں کے خلاف مدعی کھڑے کرتے ہوئے درخواستوں کے ذریعے بلیک میلنگ کا سلسلہ شروع کررکھا ہے اس حوالے سے شیخوپورہ ، قصور اور لاہورکی بیشتر ایسی ہائوسنگ سکیموں کے خلاف درخواستیں دیکر سماعت کی جارہی ہے جن کی جانب سے اینٹی کرپشن کے اس ریڈر اور سی ایم پی برانچ کے سٹاف کے ساتھ معاونت نہ کی ہو۔لاہورڈویژن میں اربوں روپے کی انویسٹمنٹ کرکے ہائوسنگ سکیمیں بنانے والے مالکان ایل ڈی اے کی سی ایم پی برانچ کے افسران کی وجہ سے شدید مالی مشکلات کا شکار ہونے لگے۔ ایل ڈی اے کی سی ایم پی برانچ سے ہائوسنگ سکیموں کی منظوری کے لئے خود رجوع کرنے والوں کو ذلیل وخوار کرنا ایل ڈی اے افسرا ن کا وطیرہ بن گیا۔ اس حوالے سے لاہور ڈویلپرز ایسوسی ایشن نے وزیراعلیٰ پنجاب، چیف سیکرٹری، ڈی جی اینٹی کرپشن پنجاب اور ڈی جی ایل ڈی اے سے مطالبہ کیا ہے جو ہائوسنگ سکیموں کے مالکان خود ایل ڈی اے سے رجوع کرکے سکیم منظور کروانا چاہتے ہیں یا ان کا ریکارڈ سٹی گورنمنٹ سے منتقل ہوا ہے ان کو انتقامی کارروائیوں کا نشانہ بنایاجارہا ہے انکی تحقیقات کی جائے اور جو لاہور میں فیروزپور روڈ لاہور، رائیونڈ روڈ ، جی ٹی روڈ، ہربنس پورہ میں جو ہائوسنگ سکیمیں مامور ہیں ان کے خلاف کوئی قانونی کارروائی نہیں کی جارہی اس کی وجوہات بھی سامنے آجائیگی۔ سکیم مالکان کا کہنا ہے کہ آئندہ چند روز میں ڈی جی اینٹی کرپشن کو وہ درخواست دیتے ہوئے بلیک میل کرنے والوں کی نشاندہی کریںگے۔ دوسری جانب محکمہ اینٹی کرپشن ترجمان کا کہنا ہے کہ بلیک میلنگ یا محکمہ کی آڑ میں رشوت وصولی کا مطالبہ کرنے میں اگرکوئی بھی سرکاری آفیسر یا ملازم پایا گیا تو اس کے خلاف بھی بلاامتیاز فوری قانونی کارروائی عمل میں لائی جائیگی۔ اس طرح ایل ڈی اے کی سی ایم پی برانچ نے بھی الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان الزامات میں کوئی صداقت نہ ہے۔

یہ بھی پڑھیں

پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان پہلا ٹیسٹ ڈرا ہوگیا

 کراچی: پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان دو میچوں پر مشتمل سیریز کا پہلا ٹیسٹ میچ …