آؤٹ فال روڈ دھماکہ ریموٹ کنٹرول تھا، مزید تحقیقات کیلئے جی آئی ٹی قائم

(میڈیا پاکستان ): آؤٹ فال روڈ ھماکے کی تحقیقات میں مزید پیش رفت ہوئی ہے۔7 اگست کی شام پھلوں سے لدے ٹرک میں ہونے والا دھماکہ ریموٹ کنٹرول تھا۔ ٹرک نوازشریف کی ریلی کو ٹارگٹ کرنے کیلئے لایا گیا۔ بارود سے بھرے ٹرک ڈرائیور نے ریلی کا روٹ تبدیل ہونے پر اگلے روز ریموٹ کنٹرول سے اڑا دیا، محکمہ داخلہ نے کیس کی مزید تحقیقات کیلئے جے آئی ٹی تشکیل دے دی۔
تفتیشی ذرائع کے مطابق دھماکے میں 80 کلو گرام سے زائد بارودی ٹرک کے نچلے حصے میں ریمورٹ کنٹرول ڈیوائس نصب کر کے چھپایا گیا تھا۔ دھماکہ دو روز قبل پارکنگ میں ٹرک کھڑا کر کے لاپتہ ہونے والے ڈرائیور نے واپس آکر کیا۔ پارکنگ سٹینڈ کے مالک نے لوئر مال پولیس کو ٹرک کھڑا کرکے ڈرائیور کے لا پتہ ہونے بارے بھی آگاہ کیا تھا۔ جس کی رپورٹ تھانہ لوئر مال میں درج ہوئی تھی۔
تحقیقاتی ٹیمیوں نے ایکسائز انسپکٹر سمیت 4 ایجنٹوں کو مزدے کا ریکارڈ ٹمپر کرنے اور بوگس رجسٹریشن کرنے کے الزام میں حراست میں لیا ہوا ہے۔ تحقیقاتی ٹیمیں تاحال ریمورٹ کنٹرول دھماکہ کرنے والے ٹرک ڈرائیور اور اس سکے سہولت کاروں کا پتہ نہیں چلا سکی۔ دھماکے میں 2 افراد جاں بحق جبکہ درجنوں زخمی ہوئے تھے۔
محکمہ داخلہ نے دھماکے کی مزید تحقیقات کیلئے ایس ایس پی سی ٹی ڈی ڈاکٹراقبال کی سربراہی میں جی آئی ٹی تشکیل دے دی۔ ٹیم میں سی آئی اے کے انسپکٹر طارق الیاس کیانی، انسپکٹر سی ٹی ڈی رانا صدیق اور حساس اداروں کے افسر بھی شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان پہلا ٹیسٹ ڈرا ہوگیا

 کراچی: پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان دو میچوں پر مشتمل سیریز کا پہلا ٹیسٹ میچ …