کمشنر لاہور عبداللہ خان سنبل سیف سٹیز پراجیکٹ کو تیزی سے مکمل کرنے کی ہدایت

کمشنر لاہور ڈویژن عبداﷲ خان سنبل نے کہا ہے کہ سیف سٹیز پراجیکٹ کے دوران کی جانے والی کھدایوں کی مرمت و بحالی کے کام کو پوری سنجیدگی کے ساتھ مکمل کیا جائے جس کے لیے سیف سٹیز اتھارٹی سمیت تمام ترقیاتی کاموں پر کام کرنے والے ادارے و محکمے سامنے آنے والے امور کے حل کے لیے فوری طور پر متعلقہ جگہوں کے دورے کریں۔ انہوں نے کہا کہ تمام متعلقہ محکمے روزانہ کی بنیاد پر یا ضرورت کی بنیاد پر عمل میں لائی جانے والی کارروائی کو اپ لوڈ کریں۔ انہوں نے کہا کہ مرمت و بحالی کے نامکمل کاموں کو کسی صورت بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ان کو معیار کے مطابق بحال کیا جانا ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیف سٹیز پراجیکٹ نہ صرف سیفٹی و سیکورٹی بلکہ ٹریفک مینجمنٹ کے لیے بھی کلیدی کردار ادا کرے گا۔ لاہور میں 1066 کلومیٹر طویل فائبر آپٹک کیبل بچھائی جا چکی ہے جبکہ 124 کلومیٹر کیبل بچھانے کا کام جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیف سٹیز اتھارٹی کم سے کم وقت میں این او سی جاری کرے گی تاکہ دیگر ترقیاتی کاموں پر مامور اداروں و محکموں کے کام میں کوئی رکاوٹ نہ آئے۔ کمشنر لاہور ڈویژن عبداﷲ خان سنبل کی زیر صدارت اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ تمام محکمے اپنے اپنے پراجیکٹس و ترقیاتی سکیموں پر کام کرنے سے پہلے سیف سٹیز اتھارٹی کو رابطے میں لیں گے۔ انہوں نے کہا کہ سیف سٹیز پراجیکٹ حکومت پنجاب کا لاہور سمیت پنجاب کے بڑے شہروں کی سیکورٹی کو یقینی بنانے کے لیے بہت بڑا اقدام ہے۔ یہ ایک اپنی نوعیت کا میگا پراجیکٹ ہے اس کے تحت سب سے پہلے صوبائی دارالخلافہ لاہور میں 1066 کلومیٹر فائبر آپٹک کیبل بچھالی گئی ہے جو کہ ایک وسیع نیٹ ورک ہے۔ انہوں نے کہا کہ مجموعی طور پر 1170 کلو میٹر طویل فائبر آپٹک کیبل کا نیٹ ورک بچھایا جانا تھا جس میں سے 1066 کلومیٹر پر کام مکمل کر لیا گیا ہے۔ تمام صوبائی و وفاقی ترقیاتی اسکیموں پر کام کرنے والی ایجنسیوں اور سیف سٹیز اتھارٹی کے درمیان نہایت متحرک اور فعال رابطہ کار کے لیے میکانزم کی ناگزیر ضرورت ہے ۔
کمشنر لاہور ڈویژن عبداﷲ خان سنبل کی زیر صدارت اجلاس میں اے ڈی سی عثمان خالد، پراجیکٹ مینجمنٹ سپیشلسٹ سیف سٹیز علی شمشیر، ڈائریکٹر ڈویلپمنٹ امجد چوہدری، اے ڈی سی آر ننکانہ عامر شفیق، اے سی آر آصف رضا ، چیف انجینئر ٹیپا سیف الرحمن، ایل ڈی اے، واسا، پبلک ہیلتھ انجینئرنگ، پی ایچ اے، لیسکو، سوئی گیس، پی ٹی سی ایل، روڈز، لاہور پولیس، ٹریفک پولیس سمیت سیف سٹیزاتھارٹی کے افسران و دیگر محکموں کے افسران نے شرکت کی۔

یہ بھی پڑھیں

پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان پہلا ٹیسٹ ڈرا ہوگیا

 کراچی: پاکستان اور نیوزی لینڈ کے درمیان دو میچوں پر مشتمل سیریز کا پہلا ٹیسٹ میچ …