پی ٹی آئی اور پی پی کے کارکنوں کا ٹکرائو ہر طرف پتھرائو ہی پتھرائو


کراچی (میڈیا92نیوز) کراچی کے علاقے گلشن اقبال کی حکیم سعید گرائونڈ میں پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف کے کارکن آمنے سامنے آگئے۔ نجی ٹی وی کے مطابق پی ٹی آئی اور پی پی کے کارکنوں نے ایک دوسرے پر پتھرائو کیا۔ اس دوران ہوائی فائرنگ بھی کی گئی جس سے کشیدگی بڑھ گئی ایک دوسرے پر پتھرائو کے بعد کارکنوں میں بھگدڑ مچ گئی۔ پی پی کے مشتعل کارکنوں نے حکیم سعید گرائونڈ میں پی ٹی آئی کا تین دن سے لگا کیمپ اکھاڑ دیا۔ مشتعل کارکنوں نے گرائونڈ کے باہر کھڑی موٹر سائیکلیں توڑ دیں پولیس اہلکار بھی پتھرائو کی زد میں آگئے۔ علاقہ میدان جنگ کا منظر پیش کر رہا تھا کشیدگی کے باعث علاقے میں ٹریفک جام ہوگئی۔ دونوں طرف کے کارکنوں نے ایک دوسرے پر ڈنڈوں سے بھی حملے کئے متعدد افراد زخمی ہونے کی اطلاع پر پولیس کی ایک وین حالات کنٹرول کرنے میں ناکام رہی پولیس اور رینجرز کی مزید نفری طلب کرلی گئی ہے۔ پی پی رہنما سعید غنی نے کہا کہ پی ٹی آئی کارکنوں نے داداگیری کا انداز اپنایا ہے۔ پی ٹی آئی ایم کیو ایم کی بی ٹیم ہے۔ پی ٹی آئی رہنما علی زیدی نے الزام لگایا کہ پی پی کے لوگوں نے ہم پر براہ راست فائرنگ کی ہم خاموشی سے کیمپ میں بیٹھے تھے پی پی کارکنوں نے پتھرائوکیا۔ مشتعل کارکنوں نے متعدد گاڑیوں ، موٹر سائیکلوں ، دو ٹرکوں کو نذر آتش کر دیا۔ یونیورسٹی روڈ پر دکانیں اور پٹرول پمپ بند کر دیئے گئے۔وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے پی پی اور پی ٹی آئی کے کارکنوں میں تصادم کا نوٹس لے لیا۔ مراد علی شاہ نے کہا پی پی نے تمام طریقہ کار پر عمل کر کے اجازت حاصل کی ۔ گورنر سندھ محمد زبیر نے پی پی اور پی ٹی آئی سے پر امن رہنے کی اپیل کر دی ہے انہوں نے کہا کہ پولیس اور رینجرز نے کراچی کو پر امن شہر بنا دیا تھا۔ پوری قوم دیکھ رہی ہے کہ دونوں جماعتوں کے کارکن کیسے لڑ رہے ہیں پی ٹی آئی نے جلسے کی اجازت نہیں لی ۔ جبکہ پی پی نے جلسے کیلئے پہلے اجازت لی ۔

یہ بھی پڑھیں

محکمہ ٹرانسپورٹ پنجاب کا روڈا اور سی بی ڈی پنجاب میں سفری سہولیات کے لئے نئے نظام کی تشکیل کا فیصلہ

محکمہ ٹرانسپورٹ پنجاب نے عصر حاضر کے تقاضوں کو مد نظر رکھتے ہوئے روڈا اور …