یوٹیوب کا آمدنی میں اضافے کیلئے شدت پسند مواد پھیلانے کا انکشاف


واشنگٹن (ٹیکنالوجی ڈیسک/ میڈیا92 نیوز) یوٹیوب پر گزشتہ دنوں کئی سنجیدہ اعتراضات اٹھائے گئے ہیں اور اب تازہ خبر یہ آئی ہے کہ اس مشہور ویڈیو ویب سائٹ پر شدت پسندی اور متنازع معاملات کو ہوا دینے والے چینلز پر دنیا کی ایسی کمپنیوں کے اشتہارات چل رہے ہیں جو عالمی سطح پر مقبول ہیں ۔سی این این نے اپنے ذرائع سے تحقیق کے بعد ایک رپورٹ شائع کی ہے جس میں بڑی ٹیکنالوجی کمپنیوں ،اخبارات ،صارفین کو سہولیات فراہم کرنے والی فرمز یہاں تک کہ حکومتی ایجنسیوں کے اشتہارات بھی ایسی ویڈیو کے درمیان ظاہر ہورہے ہیں جو بچوں سے بدفعلی ،سفید فام نسل پرستی نازی فکر ،سازش نظریات ،نفرت انگیز سوچ اور شمالی کوریا کے پروپیگنڈ ے کو پروان چڑ ھارہی ہیں ۔اشتہارات دینے والے اداروں میں نامی گرامی کمپنیاں شامل ہیں جن میں ایڈیڈ اس ،ایمیز ون ،سسکو ،فیس بک ،ہارشے ،موزیلا ،ہلٹن ،لنکڈ ان ،اور دیگر مشہور فرمز اور ٹیکنالوجی کمپنیاں بھی شامل ہیں ۔علاوہ ازیں متنازع اور شدت پسندی کو فروغ دینے والے ان چینلز پر پانچ امریکی حکومتی تنظیموں کے اشتہار بھی دکھائے جارہے ہیں اور وہ ان تمام معاملات سے بالکل بے خبر ہیں ۔یوٹیوب کے اس قدم سے کئی سوالات جنم لیتے ہیں کہ آیا وہ برانڈ کو ان کے معیارات کے تحت درست چینلز پر دکھانے کی پابند ہے یا پھر یہ کسی خود کار نظام کے تحت ہوتا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں

ملائکہ اروڑا کا سابق شوہر ارباز خان کیساتھ فیملی ڈنر، ویڈیو وائرل

ممبئی: بالی ووڈ اداکارہ و ماڈل ملائکہ اروڑا نے اپنے سابق شوہر ارباز خان اور اُن کی …