ایف بی آر نے مزید 14 اداروں کے 81 ہزار نان فائلر ملازمین کا سراغ لگا لیا

اسلام آباد(میڈیا پاکستان) فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے جے ڈبلیو ڈی شوگر ملز، کراچی الیکٹرک پراویڈنٹ فنڈ اور ایجوکیشنل سروسز پرائیویٹ لمیٹڈ سمیت مزید 14 اداروں کے قابل ٹیکس آمدنی رکھنے کے باوجود ٹیکس گوشوارے جمع نہ کروانے والے مجموعی طور پر 81 ہزار 725 افسران و ملازمین کا سراغ لگا لیا ہے۔فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے سینئر افسر نے گزشتہ روزمیڈیا کو بتایا کہ جن سرکاری،نیم سرکاری،خودمختار اور نجی اداروں کے قابل ٹیکس آمدنی رکھنے کے باوجود ٹیکس گوشوارے جمع نہ کروانے والے ملازمین کے بارے میں ریکارڈ حاصل ہوتا ہے تو ایف بی آرکے افسران ٹیکس آگہی مہم کے تحت ان اداروں کے سربراہان سے ملاقاتیں کرکے ان کے ملازمین کو ٹیکس گوشوارے جمع کروانے میں سہولت فراہم کرنے کی پیشکش کررہے ہیں اور اس بارے میں پہلے بھی بہت سے اداروں کے سربراہان سے ایف بی آر کی ٹیم ملاقاتیں کرچکی ہے اور ان اداروں کے سربراہان کی جانب سے حوصلہ افزا تعاون کی یقین دہانی کروائی گئی ہے جو کہ بہت خوش آئند ہے اور توقع ہے کہ ایف بی آر کو اس مہم سے نئے لوگوں کو ٹیکس نیٹ میں لانے میں مدد ملے گی۔
اس بارے میں ’’ایکسپریس‘‘ کودستیاب دستاویز کے مطابق فیڈرل بورڈ آف ریونیو کی جانب سے جن 14 اداروں کے قابل ٹیکس آمدنی رکھنے کے باوجود گوشوارے جمع نہ کروا نے والے 81 ہزار 725 افسران و ملازمین کا سُراغ لگایا ہے۔ ان اداروں کے مجموعی افسران و ملازمین کی تعداد ایک لاکھ 5 ہزار 49 ہے جن میں سے صرف23ہزار324 افسران و ملازمین کی جانب سے انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروائے جارہے ہیں اور باقی81 ہزار725ملازمین و افسران قابل ٹیکس آمدنی رکھنے کے باوجود ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔
دستاویز کے مطابق جن اداروں کے ملازمین کا سُراغ لگایا گیا ہے۔ ان میں سے میسرز جے ڈبلیو ڈی شوگر ملزکے مجموعی طور پر9 ہزار969 ملازمین سے 206 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ 9 ہزار 763 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔
آغا خان اسپتال اینڈ میڈیکل کالج فاؤنڈیشن کے مجموعی طور پر 10 ہزار 491ملازمین سے ایک ہزار45 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ 9 ہزار446 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں،آئل اینڈ گیس ڈیولپمنٹ کمپنی لمیٹڈکے مجموعی طور پر9 ہزار467 ملازمین سے ایک ہزار782 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ سات ہزار 685ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔
میزان بینک لمیٹڈ کے مجموعی طور پر8 ہزار 674ملازمین سے دو ہزار419 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ چھ ہزار 255ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔ بینک الحبیب لمیٹڈکے مجموعی طور پر8 ہزار346 ملازمین سے دو ہزار260 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ چھ ہزار86 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔
مسلم کمرشل بینک لمیٹڈکے مجموعی طور پر آٹھ ہزار161 ملازمین سے تین ہزار18 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ پانچ ہزار143 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔ کریسنٹ بہومین لمیٹڈکے مجموعی طور پرسات ہزار 945ملازمین سے 82ہزار ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ سات ہزار 863ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔ عسکری بینک لمیٹڈکے مجموعی طور پر سات ہزار545 ملازمین سے دوہزار تین سو پچانوے ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ پانچ ہزار ایک سو پچاس ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔
کراچی الیکٹرک پراویڈنٹ فنڈ کے مجموعی طور پر پانچ ہزار دو سو بیس ملازمین سے ایک ہزار تین سو پندرہ ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ تین ہزار 905ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔ ایجوکیشنل سروسز پرائیویٹ لمیٹڈ کے مجموعی طور پرپانچ ہزار 141ملازمین سے 808ہزار ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ چارہزار333 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔
اسٹینڈرڈ چارٹرڈ بینک پاکستان لمیٹڈکے مجموعی طور پر چار ہزار557 ملازمین سے ایک ہزار 617ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ دو ہزار940 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔ بزنس اینڈ کمیونیکیشن سسٹم پرائیویٹ لمیٹڈکے مجموعی طور پرچار ہزار385 ملازمین سے 136ہزار ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ چار ہزار 249ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں اورفیصل بینک لمیٹڈکے مجموعی طور پر چار ہزار ایک سو بارہ ملازمین سے ایک ہزار413 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع کروارہے ہیں جبکہ دوہزار699 ملازمین انکم ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروارہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں

خام تیل کی عالمی قیمتیں کم ہوکر 82.87ڈالر بیرل ہوگئیں

اسلام آباد: خام تیل کی عالمی قیمتیں82.87ڈالر فی بیرل ہوگئیں جب کہ دوسری جانب اوگرا …